Loading...
لاگ ان

ہم اُسے کاش رُو بہ رُو کرتے

انور شعور


ہم اُسے کاش رُو بہ رُو کرتے
اور آنکھوں سے گفتگو کرتے

دوستو! میرے ساتھ یہ نیکی
تم نہ کرتے تو کیا عدو کرتے

ہم سے پوچھے کوئی پتہ اُس کا
عمر گزری ہے جستجو کرتے

کیسے میرے بیان کی تردید
اُن کے لب ہائے مشک بو کرتے

اے شعور آسمان ہل جاتا
ہم جو بے اختیار ہُو کرتے


تبصرہ

No Comments Posted
Log in to post comments.
Keyboard